زکی کیفی

نعت کائنات سے
Jump to navigationJump to search

Naat Kainaat Zaki Kaifi.jpg


زکی کیفی بیسویں صدی کے ایک قادر الکلام شاعر مفتی اعظم پاکستان مفتی محمد شفیع (بانی و مہتمم جامعہ دارالعلوم کراچی) کے سب سے بڑے صاحبزادے اور مفتی محمد رفیع عثمانی، مفتی محمد تقی عثمانی اور مولانا ولی رازی کے برادر اکبر اور دورِ حاضر کے نامور شاعر سعود عثمانی کے والد گرامی ہیں۔ آپ 7 مارچ 1926 کو بھارت کے قصبے دیوبند میں پیدا ہوئے

نعت گوئی میں "خانوادہ عثمانی" کو ہمیشہ سے خصوصی امتیاز حاصل رہا ہے۔

مطبوعات[ترمیم | ماخذ میں ترمیم کریں]

زکی کیفی " کیفیات " نامی ایک خوبصورت اور اچھوتے شعری مجموعے کے شاعر ہونے کا اعزاز رکھتے ہیں۔ جو آپ کی وفات کے بعد شائع ہوا۔

حمدیہ و نعتیہ کلام[ترمیم | ماخذ میں ترمیم کریں]


اے شہِ ہاشمی لقب قدرتِ رب کے شاہکار[ترمیم | ماخذ میں ترمیم کریں]

اے شہِ ہاشمی لقب قدرتِ رب کے شاہکار

آپ کے در کے ہیں گدا میر و وزیر و تاجدار


آپ کے ذکر و فکر سے روح کو مل گیا قرار

مظہرِ شانِ کبریا ! آپ پہ جان و دل نثار


آپ نہ تھے تو دَہر میں چھائی تھی ہر طرف خزاں

آپ جو آئے ، آ گئی پھر سے جہان میں بَہار


آپ کا طرزِ گفتگو، موج ہے سلسبیل کی !

طرزِ خرام آپ کا ، جیسے نسیمِ مُشکبار !


پھول سے بھی لطیف تر خار تِرے دیار کے

ذرّے تِری زمین کے ماہ و نجوم درکنار


آپ شفیعِ عاصیاں ، آپ پناہِ بے کساں

مرہمِ قلبِ ناتواں ، خستہ دلوں کے غمگُسار


آپ کے دم قدم سے ہے رونقِ بزمِ رنگ و بو

غنچے میں آپ کی ادا ، پھول میں آپ کا نکھار


آپ کی مدح کر سکے ، تاب کہاں زبان کو

آپ ہیں مرکزِ وجود ، آپ ہیں بحرِ بے کنار


کیفی خستہ حال پر اے شہ بحر و کرم !

آپ کا امتی تو ہے ، گرچہ ہے وہ گناہگار

مدینہ کے رَھرو بیاباں بیاباں[ترمیم | ماخذ میں ترمیم کریں]

مدینہ کے رَھرو بیاباں بیاباں

چلے جا رہے ہیں غَزَلخواں غَزَلخواں


ہے بزمِ تصوّر میں روضے کا منظر

نگاہوں کا عالَم گُلِستاں گُلِستاں


قریب آ گیا ہے دیارِ مدینہ

غمِ زندگی ہے گُریزاں گُریزاں


وہ دنیا کی جنّت مدینے کی بستی

جہاں ذرّہ ذرّہ زَر افشاں زَر افشاں


یہاں ہر نَفَس ہے مُعطّر مُعطّر

یہاں زُلفِ نِکہَت پریشاں پریشاں


یہاں خار و خَس کے جَلو میں ملی ہیں

ہزاروں بَہاریں ، خَراماں خَراماں


یہاں مست ہیں سب بُرے بھی بھلے بھی

ہے سب پر عنایت ، فَراواں فَراواں


یہاں بے بَصَر بھی عَیاں دیکھتے ہیں

نَقوشِ محبّت ، فَروزاں فَروزاں


یہیں سے ملا تھا ، یہیں مل سکے گا

سکونِ دل و جاں ، سکونِ دل و جاں


کرشمے ہیں اُن کی نگاہِ کرم کے

خَیاباں خَیاباں ، بَہاراں بَہاراں


خُدا دن وہ لائے مدینے میں پہنچے

گنہگار کیفی ، پَشِیماں پَشِیماں

پوچھا ہے دُشمنوں نے جب اپنے شعور سے[ترمیم | ماخذ میں ترمیم کریں]

پوچھا ہے دُشمنوں نے جب اپنے شعور سے

پِنہاں ملی دلوں میں عقیدت حضور سے


اُس جانِ جاں کا نام مبارک لبوں پہ ہے

دل آشنا ہے عالمِ کیف و سرور سے


فیضانِ عام ساقئِ کوثر کا دیکھئیے

ہم بے پئے ہیں مست شرابِ طَہور سے


چھائی ہوئی تھی ظلمتِ شب دور دور تک

آتی ہے اب نویدِ سحر دور دور سے


اِس کا اثر اگر مِرے کردار میں نہ ہو

کیسے کہوں مجھے ہے محبّت حضور سے!؟


سائے میں ہیں اک ایسے رؤف و رحیم کے

جس نے ملا دیا ، ہمیں رب غفور سے


دولت خدا نے دی جنھیں عشقِ رسول کی

دُنیا سے اُن کو کام نہ حُور و قُصور سے


وہ صرف کور چشم نہیں۔ تِیرہ بَخت ہیں

جو کسبِ فیض کر نہ سکے اُن کے نور سے


آمد سے اُنکی زیست کی قدریں بدل گئیں

دُنیا حسین بن گئی ، اُن کے ظہور سے


آسودہ آ کے منزلِ بَطحا میں ہو گیا

جلووں کا کارواں جو چلا کوہِ نور سے


کیفی پڑھا درود تو محسوس یہ ہوا

جیسے گزر رہا ہوں اک سَیلِ نور سے


قسمت سے مل گئی ہے قیادَت حضور کی[ترمیم | ماخذ میں ترمیم کریں]

قسمت سے مل گئی ہے قیادَت حضور کی

الله کا کرم ہے ، عنایت حضور کی


دو حرف ہیں خلاصۂ عرفان و آگہی

وحدانیت خدا کی، رسالت حضور کی


بھر لی ہیں ہر گدا نے سعادت سے جھولیاں

نگری رہے ہمیشہ سلامت حضور کی


گُل کی مِہک صبا کی روَش چاندنی کی رو

یہ سب کی سب ہیں گردِ لطافت حضور کی


پڑھ پڑھ درود نُطق بھی سرشار کیوں نہ ہو

اِس میں جھلَک رہی ہے فصاحت حضور کی


آمد کا مژدہ دے کے گئے تھے خلیل بھی

سمجھا گئے مسیح علامت حضور کی


ربِّ کریم ! شانِ کریمی کا واسطہ !

جنّت میں ہو نصیب رَفاقَت حضور کی


ہر دور میں جدید تقاضوں کے ساتھ ساتھ

ہوتی ہے آشکار صداقت حضور کی


حاتَم کا ذکر کیا وہ زمانہ گزر گیا

جاری ہے آج تک بھی سخاوت رسول کی


قرباں ہم اُس پہ وہ ہمیں محبوب کیوں نہ ہو ؟

ایمان ہے خدا پہ ، امانت حضور کی


بوبکر و عمر پہ یہ انعام ختم ہے

ہر آن مل رہی ہے سعادت حضور کی


کیفؔی! خدا نصیب کرے اپنے فضل سے

اُلفت کے ساتھ ساتھ اطاعت حضور کی


وفات[ترمیم | ماخذ میں ترمیم کریں]

آپکی وفات 28 جنوری 1975 کو ہوئی ۔ اس کے مطابق آپکی شعر گوئی کی عمر تقریبا 20 سال کا عرصہ ہے

مزید دیکھیے[ترمیم | ماخذ میں ترمیم کریں]

محمد شفیع، مفتی | رفیع عثمانی | تقی عثمانی | ولی رازی | سعود عثمانی


نعت کائنات پر نئی شخصیات

اپنے ادارے کی نعتیہ سرگرمیاں، کتابوں کا تعارف اور دیگر خبریں بھیجنے کے لیے رابطہ کیجئے۔Email.png Phone.pngWhatsapp.jpg Facebook message.png

"نعت کائنات " پر اپنے تعارفی صفحے ، شاعری، کتابیں اور رسالے آن لائن کروانے کے لیے رابطہ کریں ۔ سہیل شہزاد : 03327866659
نئے صفحات